نہ ہم سفر نہ کسی ہم نشیں سے نکلے گا

راحتؔ اندوری

نہ ہم سفر نہ کسی ہم نشیں سے نکلے گا

راحتؔ اندوری

MORE BY راحتؔ اندوری

    نہ ہم سفر نہ کسی ہم نشیں سے نکلے گا

    ہمارے پاؤں کا کانٹا ہمیں سے نکلے گا

    میں جانتا تھا کہ زہریلا سانپ بن بن کر

    ترا خلوص مری آستیں سے نکلے گا

    اسی گلی میں وہ بھوکا فقیر رہتا تھا

    تلاش کیجے خزانہ یہیں سے نکلے گا

    بزرگ کہتے تھے اک وقت آئے گا جس دن

    جہاں پہ ڈوبے گا سورج وہیں سے نکلے گا

    گزشتہ سال کے زخمو ہرے بھرے رہنا

    جلوس اب کے برس بھی یہیں سے نکلے گا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    راحتؔ اندوری

    راحتؔ اندوری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY