نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم

فانی بدایونی

نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم

فانی بدایونی

MORE BY فانی بدایونی

    نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم

    رہا یہ وہم کہ ہم ہیں سو وہ بھی کیا معلوم

    دعا تو خیر دعا سے امید خیر بھی ہے

    یہ مدعا ہے تو انجام مدعا معلوم

    ہوا نہ راز رضا فاش وہ تو یہ کہیے

    مرے نصیب میں تھی ورنہ سعیٔ نا معلوم

    مری وفا کے سوا غایت جفا کیوں ہو

    تری جفا کے سوا حاصل وفا معلوم

    کچھ ان کے رحم پہ تھی یوں ہی زندگی موقوف

    کہ ان کو راز محبت بھی ہو گیا معلوم

    ترے خیال کے اسرار بے خودی میں کھلے

    ہمیں چھپا نہ سکے ورنہ دل کو کیا معلوم

    فریب امن میں کچھ مصلحت تو ہے ورنہ

    سکون کشتی و توفیق ناخدا معلوم

    وہ التفات کہ تھا اس کی انتہا بھی ہے

    خدا کی مار کہ دل کو یہی نہ تھا معلوم

    یہ زندگی کی ہے روداد مختصر فانیؔ

    وجود درد مسلم علاج نا معلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY