نئے دیس کا رنگ نیا تھا

ناصر کاظمی

نئے دیس کا رنگ نیا تھا

ناصر کاظمی

MORE BYناصر کاظمی

    نئے دیس کا رنگ نیا تھا

    دھرتی سے آکاش ملا تھا

    دور کے دریاؤں کا سونا

    ہرے سمندر میں گرتا تھا

    چلتی ندیاں گاتے نوکے

    نوکوں میں اک شہر بسا تھا

    نوکے ہی میں رین بسیرا

    نوکے ہی میں دن کٹتا تھا

    نوکا ہی بچوں کا جھولا

    نوکا ہی پیری کا عصا تھا

    مچھلی جال میں تڑپ رہی تھی

    نوکا لہروں میں الجھا تھا

    ہنستا پانی، روتا پانی

    مجھ کو آوازیں دیتا تھا

    تیرے دھیان کی کشتی لے کر

    میں نے دریا پار کیا تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نئے دیس کا رنگ نیا تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY