پھر مری راہ میں کھڑی ہوگی

خلیل الرحمن اعظمی

پھر مری راہ میں کھڑی ہوگی

خلیل الرحمن اعظمی

MORE BYخلیل الرحمن اعظمی

    پھر مری راہ میں کھڑی ہوگی

    وہی اک شے جو اجنبی ہوگی

    شور سا ہے لہو کے دریا میں

    کس کی آواز آ رہی ہوگی

    پھر مری روح میرے گھر کا پتہ

    میرے سائے سے پوچھتی ہوگی

    کچھ نہیں میری زرد آنکھوں میں

    ڈوبتے دن کی روشنی ہوگی

    رات بھر دل سے بس یہی باتیں

    دن کو پھر درد میں کمی ہوگی

    بس یہی ایک بوند آنسو کی

    میرے حصے کی رہ گئی ہوگی

    پھر مرے انتظار میں مری نیند

    میرے بستر پہ جاگتی ہوگی

    جانے کیوں اک خیال سا آیا

    میں نہ ہوں گا تو کیا کمی ہوگی

    مآخذ
    • کتاب : aasmaan ai aasmaan (Pg. 189)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY