پیری میں شوق حوصلہ فرسا نہیں رہا

عبد الغفور نساخ

پیری میں شوق حوصلہ فرسا نہیں رہا

عبد الغفور نساخ

MORE BYعبد الغفور نساخ

    پیری میں شوق حوصلہ فرسا نہیں رہا

    وہ دل نہیں رہا وہ زمانہ نہیں رہا

    کیا ذکر مہر اس کی نظر میں ہے دل وہ خوار

    شایان جور و ظلم دل آرا نہیں رہا

    جھگڑا مٹا دیا بت کافر نے دین کا

    اب کچھ خلاف مومن و ترسا نہیں رہا

    عشاق و بوالہوس میں نہیں کرتے وہ تمیز

    واں امتیاز نیک و بد اصلا نہیں رہا

    کیوں بہر سیر آنے لگے گل رخان دہر

    پیری میں دل سزائے تماشا نہیں رہا

    کہہ دو کہ قبر نعش بھی کی اس کی پائمال

    نام و نشان عاشق رسوا نہیں رہا

    اب تک یہاں ہے عجز و نیاز و وفا کی دھوم

    واں لطف و التفات و مدارا نہیں رہا

    کشتی بغیر دشت نوردی ہو کس طرح

    اشکوں سے بحر ہو گیا صحرا نہیں رہا

    مستی میں رات وہ نہ کھلے مجھ سے ہم نشیں

    کچھ اعتبار نشۂ صہبا نہیں رہا

    کیوں جائیں پھر کے کعبے سے نساخؔ دیر کو

    وہ سر نہیں رہا وہ سودا نہیں رہا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پیری میں شوق حوصلہ فرسا نہیں رہا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY