روز مرغا بنا کرے کوئی

کیف احمد صدیقی

روز مرغا بنا کرے کوئی

کیف احمد صدیقی

MORE BYکیف احمد صدیقی

    روز مرغا بنا کرے کوئی

    کب تک آخر پٹا کرے کوئی

    جب کہیں نوکری نہیں ملتی

    ڈگریاں لے کے کیا کرے کوئی

    مجھ کو ریڈنگ سے سخت نفرت ہے

    میں سنوں اور پڑھا کرے کوئی

    جس میں آتی ہو بو تعصب کی

    ایسی تاریخ کیا کرے کوئی

    جن میں جنگ و جدل کے قصے ہوں

    وہ کتب کیوں پڑھا کرے کوئی

    غیر ملکی زبان انگلش کو

    خوا مخواہ کیوں رٹا کرے کوئی

    نہیں امید کامیابی جب

    امتحاں دے کے کیا کرے کوئی

    خوب انصاف ہے کہ درجے میں

    میں پٹوں اور خطا کرے کوئی

    کب تک آخر بغیر سمجھے ہوئے

    فارمولے رٹا کرے کوئی

    کیفؔ آتا نہیں جواب خدا

    خط کہاں تک لکھا کرے کوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY