مستیٔ رندانہ ہم سیرابیٔ مے خانہ ہم

علی سردار جعفری

مستیٔ رندانہ ہم سیرابیٔ مے خانہ ہم

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    مستیٔ رندانہ ہم سیرابیٔ مے خانہ ہم

    گردش تقدیر سے ہیں گردش پیمانہ ہم

    خون دل سے چشم تر تک چشم تر سے تا بہ خاک

    کر گئے آخر گل و گلزار ہر ویرانہ ہم

    کیا بلا جبر اسیری ہے کہ آزادی میں بھی

    دوش پر اپنے لیے پھرتے ہیں زنداں خانہ ہم

    راہ میں فوجوں کے پہرے سر پہ تلواروں کی چھاؤں

    آئے ہیں زنداں میں بھی با شوکت شاہانہ ہم

    مٹتے مٹتے دے گئے ہم زندگی کو رنگ و نور

    رفتہ رفتہ بن گئے اس عہد کا افسانہ ہم

    یا جگا دیتے ہیں ذروں کے دلوں میں مے کدے

    یا بنا لیتے ہیں مہر و ماہ کو پیمانہ ہم

    قید ہو کر اور بھی زنداں میں اڑتا ہے خیال

    رقص زنجیروں میں بھی کرتے ہیں آزادانہ ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY