وہ شخص کہ میں جس سے محبت نہیں کرتا

قتیل شفائی

وہ شخص کہ میں جس سے محبت نہیں کرتا

قتیل شفائی

MORE BY قتیل شفائی

    وہ شخص کہ میں جس سے محبت نہیں کرتا

    ہنستا ہے مجھے دیکھ کے نفرت نہیں کرتا

    پکڑا ہی گیا ہوں تو مجھے دار پہ کھینچو

    سچا ہوں مگر اپنی وکالت نہیں کرتا

    کیوں بخش دیا مجھ سے گنہ گار کو مولا

    منصف تو کسی سے بھی رعایت نہیں کرتا

    گھر والوں کو غفلت پہ سبھی کوس رہے ہیں

    چوروں کو مگر کوئی ملامت نہیں کرتا

    کس قوم کے دل میں نہیں جذبات براہیم

    کس ملک پہ نمرود حکومت نہیں کرتا

    دیتے ہیں اجالے مرے سجدوں کی گواہی

    میں چھپ کے اندھیرے میں عبادت نہیں کرتا

    بھولا نہیں میں آج بھی آداب جوانی

    میں آج بھی اوروں کو نصیحت نہیں کرتا

    انسان یہ سمجھیں کہ یہاں دفن خدا ہے

    میں ایسے مزاروں کی زیارت نہیں کرتا

    دنیا میں قتیلؔ اس سا منافق نہیں کوئی

    جو ظلم تو سہتا ہے بغاوت نہیں کرتا

    مآخذ:

    • کتاب : kalam-e-qateel shifai (Pg. 105)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY