قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا

احمد فراز

قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا

    وہ شخص کوئی فیصلہ کر بھی نہیں جاتا

    آنکھیں ہیں کہ خالی نہیں رہتی ہیں لہو سے

    اور زخم جدائی ہے کہ بھر بھی نہیں جاتا

    وہ راحت جاں ہے مگر اس در بدری میں

    ایسا ہے کہ اب دھیان ادھر بھی نہیں جاتا

    ہم دوہری اذیت کے گرفتار مسافر

    پاؤں بھی ہیں شل شوق سفر بھی نہیں جاتا

    دل کو تری چاہت پہ بھروسہ بھی بہت ہے

    اور تجھ سے بچھڑ جانے کا ڈر بھی نہیں جاتا

    پاگل ہوئے جاتے ہو فرازؔ اس سے ملے کیا

    اتنی سی خوشی سے کوئی مر بھی نہیں جاتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    قربت بھی نہیں دل سے اتر بھی نہیں جاتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY