راحت نہ مل سکی مجھے مے خانہ چھوڑ کر

جلیل مانک پوری

راحت نہ مل سکی مجھے مے خانہ چھوڑ کر

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    راحت نہ مل سکی مجھے مے خانہ چھوڑ کر

    گردش میں ہوں میں گردش پیمانہ چھوڑ کر

    خم میں سبو میں جام میں نیت لگی رہی

    مے خانے ہی میں ہم رہے مے خانہ چھوڑ کر

    آنکھوں کو چھوڑ جاؤں الٰہی میں کیا کروں

    ہٹتی نہیں نظر رخ جانانہ چھوڑ کر

    آتا ہے جی میں ساقئ مہ وش پہ بار بار

    لب چوم لوں ترا لب پیمانہ چھوڑ کر

    ہوتی کہاں ہے دل سے جدا دل کی آرزو

    جاتا کہاں ہے شمع کو پروانہ چھوڑ کر

    دو گھونٹ نے بڑھا دیے رندوں کے حوصلے

    مینا و خم پہ جھک پڑے پیمانہ چھوڑ کر

    پھر بوئے زلف یار نے آ کر ستم کیا

    پھر چل دیا مجھے دل دیوانہ چھوڑ کر

    یاد آئی کس کی آنکھ کہ رند اٹھ کھڑے ہوئے

    پیمانہ توڑ کر مے و مے خانہ چھوڑ کر

    دنیا میں عافیت کی جگہ ہے یہی جلیلؔ

    جانا کہیں نہ گوشۂ مے خانہ چھوڑ کر

    مآخذ :
    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 309)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY