رکھا سر پر جو آیا یار کا خط

بہرام جی

رکھا سر پر جو آیا یار کا خط

بہرام جی

MORE BYبہرام جی

    رکھا سر پر جو آیا یار کا خط

    گیا سب درد سر کیا تھا دوا خط

    دیا خط اور ہوں قاصد کے پیچھے

    ہوا تاثیر میں کیا کہربا خط

    وہیں قاصد کے منہ پر پھینک مارا

    دیا قاصد نے جب جا کر مرا خط

    ہے لازم حال خیریت کا لکھنا

    کبھی تو بھیج او نا آشنا خط

    رہا ممنون کاغذ ساز کا میں

    سنا دے گا اسے سب ماجرا خط

    پتا ملتا نہیں اس بے نشاں کا

    لیے پھرتا ہے قاصد جا بجا خط

    رہی حسرت یہ ساری عمر بہرامؔ

    نہ مجھ کو یار نے ہرگز لکھا خط

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY