روز دل میں حسرتوں کو جلتا بجھتا دیکھ کر

خوشبیر سنگھ شادؔ

روز دل میں حسرتوں کو جلتا بجھتا دیکھ کر

خوشبیر سنگھ شادؔ

MORE BYخوشبیر سنگھ شادؔ

    روز دل میں حسرتوں کو جلتا بجھتا دیکھ کر

    تھک چکا ہوں زندگی کا یہ رویہ دیکھ کر

    ریزہ ریزہ کر دیا جس نے مرے احساس کو

    کس قدر حیران ہے وہ مجھ کو یکجا دیکھ کر

    کیا یہی محدود پیکر ہی حقیقت ہے مری

    سوچتا ہوں دن ڈھلے اب اپنا سایہ دیکھ کر

    کچھ طلب میں بھی اضافہ کرتی ہیں محرومیاں

    پیاس کا احساس بڑھ جاتا ہے صحرا دیکھ کر

    میرے خوابوں پر بھی اس نے نام اپنا لکھ لیا

    اب بھی کیوں خاموش ہوں میں یہ تماشا دیکھ کر

    سچ تو یہ ہے سب کو اپنی جان پیاری ہے یہاں

    اڑ گئے سارے پرندے پیڑ کٹتا دیکھ کر

    شادؔ جانے جی رہے ہو کون سی دنیا میں تم

    دنیا دنیا کر رہے ہو اب بھی دنیا دیکھ کر

    مأخذ :
    • کتاب : Bekhwabiyan (Pg. 2)
    • Author : Khushbir Singh Shaad
    • مطبع : Navneet Printers (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY