ساقیا تو نے مرے ظرف کو سمجھا کیا ہے

فنا نظامی کانپوری

ساقیا تو نے مرے ظرف کو سمجھا کیا ہے

فنا نظامی کانپوری

MORE BY فنا نظامی کانپوری

    ساقیا تو نے مرے ظرف کو سمجھا کیا ہے

    زہر پی لوں گا ترے ہاتھ سے صہبا کیا ہے

    میں چلا آیا ترا حسن تغافل لے کر

    اب تری انجمن ناز میں رکھا کیا ہے

    نہ بگولے ہیں نہ کانٹے ہیں نہ دیوانے ہیں

    اب تو صحرا کا فقط نام ہے صحرا کیا ہے

    ہو کے مایوس وفا ترک وفا تو کر لوں

    لیکن اس ترک وفا کا بھی بھروسا کیا ہے

    کوئی پابند محبت ہی بتا سکتا ہے

    ایک دیوانے کا زنجیر سے رشتہ کیا ہے

    ساقیا کل کے لیے میں تو نہ رکھوں گا شراب

    تیرے ہوتے ہوئے اندیشۂ فردا کیا ہے

    میری تصویر غزل ہے کوئی آئینہ نہیں

    سیکڑوں رخ ہیں ابھی آپ نے دیکھا کیا ہے

    صاف گوئی میں تو سنتے ہیں فناؔ ہے مشہور

    دیکھنا یہ ہے ترے منہ پہ وہ کہتا کیا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ساقیا تو نے مرے ظرف کو سمجھا کیا ہے نعمان شوق

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites