صبا کا نرم سا جھونکا بھی تازیانہ ہوا

نصیر ترابی

صبا کا نرم سا جھونکا بھی تازیانہ ہوا

نصیر ترابی

MORE BYنصیر ترابی

    صبا کا نرم سا جھونکا بھی تازیانہ ہوا

    یہ وار مجھ پہ ہوا بھی تو غائبانہ ہوا

    اسی نے مجھ پہ اٹھائے ہیں سنگ جس کے لیے

    میں پاش پاش ہوا گھر نگار خانہ ہوا

    جھلس رہا تھا بدن گرمئ نفس سے مگر

    ترے خیال کا خورشید شامیانہ ہوا

    خود اپنے ہجر کی خواہش مجھے عزیز رہی

    یہ تیرے وصل کا قصہ تو اک بہانہ ہوا

    خدا کی سرد مزاجی سما گئی مجھ میں

    مری تلاش کا سودا پیمبرانہ ہوا

    میں اک شجر کی طرح رہگزر میں ٹھہرا ہوں

    تھکن اتار کے تو کس طرف روانہ ہوا

    وہ شخص جس کے لیے شعر کہہ رہا ہوں نصیرؔ

    غزل سنائے ہوئے اس کو اک زمانہ ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : Range-e-Gazal (Pg. 353)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY