صد برگ گہہ دکھائی ہے گہہ ارغواں بسنت

انشا اللہ خاں انشا

صد برگ گہہ دکھائی ہے گہہ ارغواں بسنت

انشا اللہ خاں انشا

MORE BYانشا اللہ خاں انشا

    صد برگ گہہ دکھائی ہے گہہ ارغواں بسنت

    لائی ہے ایک تازہ شگوفہ یہاں بسنت

    بھر بھر کے گلستاں میں مئے عیش‌ و جشن سے

    دیتی ہے ہر گھڑی مجھے رطل گراں بسنت

    تو اٹھ چلا تو زرد ہوئے سب کے رنگ‌ رو

    کل آ گئی بہار میں یہ ناگہاں بسنت

    آتے نظر ہیں دشت و جبل زرد ہر طرف

    ہے اب کے سال ایسی ہے اے دوستاں بسنت

    شادابیٔ نسیم سے بحر سرور کو

    کرتی ہے جوش مار کے اب بے کراں بسنت

    گر فی المثل ملائکہ ہوں اہل زہد سب

    لے آوے بہر سیر انہیں موکشاں بسنت

    پتے نہیں چمن میں کھڑکتے ترے بغیر

    کرتی ہے اس لباس میں ہر دم فغاں بسنت

    گر شاخ زعفراں اسے کہیے تو ہے روا

    ہے فرح بخش واقعی اس حد کوہاں بسنت

    گروا بنا کے ریش مخضب سے محتسب

    جاتا ہے اس مقام میں جاوے جہاں بسنت

    انشاؔ سے شیخ پوچھتا ہے کیا صلاح ہے

    ترغیب بادہ دی ہے مجھے اے جواں بسنت

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY