سلیمؔ دل کو میسر سکوں ذرا نہ ہوا

سلیم احمد

سلیمؔ دل کو میسر سکوں ذرا نہ ہوا

سلیم احمد

MORE BYسلیم احمد

    سلیمؔ دل کو میسر سکوں ذرا نہ ہوا

    اگرچہ ترک محبت کو اک زمانہ ہوا

    وہ بے خودی تھی محبت کی بے رخی تو نہ تھی

    پہ اس کو ترک تعلق کو اک بہانہ ہوا

    اسی سے داد کا طالب ہوں رو بہ رو جس کے

    بیان درد محبت بھی اک فسانہ ہوا

    وہ چوب خشک ہوں محروم آتش سوزاں

    کہ بن جلائے جسے قافلہ روانہ ہوا

    نشاط درد میں فرصت کہاں کہ غور کریں

    سلیمؔ کیا ہوا الفت میں اور کیا نہ ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY