شام غم کی سحر نہیں ہوتی

ابن انشا

شام غم کی سحر نہیں ہوتی

ابن انشا

MORE BY ابن انشا

    شام غم کی سحر نہیں ہوتی

    یا ہمیں کو خبر نہیں ہوتی

    ہم نے سب دکھ جہاں کے دیکھے ہیں

    بیکلی اس قدر نہیں ہوتی

    نالہ یوں نارسا نہیں رہتا

    آہ یوں بے اثر نہیں ہوتی

    چاند ہے کہکشاں ہے تارے ہیں

    کوئی شے نامہ بر نہیں ہوتی

    ایک جاں سوز و نامراد خلش

    اس طرف ہے ادھر نہیں ہوتی

    دوستو عشق ہے خطا لیکن

    کیا خطا درگزر نہیں ہوتی

    رات آ کر گزر بھی جاتی ہے

    اک ہماری سحر نہیں ہوتی

    بے قراری سہی نہیں جاتی

    زندگی مختصر نہیں ہوتی

    ایک دن دیکھنے کو آ جاتے

    یہ ہوس عمر بھر نہیں ہوتی

    حسن سب کو خدا نہیں دیتا

    ہر کسی کی نظر نہیں ہوتی

    دل پیالہ نہیں گدائی کا

    عاشقی در بہ در نہیں ہوتی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شام غم کی سحر نہیں ہوتی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY