شباب ہو کہ نہ ہو حسن یار باقی ہے

جلیل مانک پوری

شباب ہو کہ نہ ہو حسن یار باقی ہے

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    شباب ہو کہ نہ ہو حسن یار باقی ہے

    یہاں کوئی بھی ہو موسم بہار باقی ہے

    کچھ ایسی آج پلائی ہے چشم ساقی نے

    نہ ہوش ہے نہ کوئی ہوشیار باقی ہے

    پکارتا ہے جنوں ہوش میں جو آتا ہوں

    ٹھہر ٹھہر ابھی فصل بہار باقی ہے

    کمال عشق تو دیکھو وہ آ گئے لیکن

    وہی ہے شوق وہی انتظار باقی ہے

    کسی شراب کی ہو کیا طلب جلیلؔ مجھے

    مئے الست کا اب تک خمار باقی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 287)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY