شوق ثواب کچھ نہیں خوف عذاب کچھ نہیں

امن لکھنوی

شوق ثواب کچھ نہیں خوف عذاب کچھ نہیں

امن لکھنوی

MORE BYامن لکھنوی

    شوق ثواب کچھ نہیں خوف عذاب کچھ نہیں

    جس میں نہ جوش جہد ہو اس کا شباب کچھ نہیں

    زندگی اک سوال ہے جس کا جواب موت ہے

    موت بھی اک سوال ہے جس کا جواب کچھ نہیں

    نغمۂ نو کے واسطے غیر کی احتیاج کیا

    چھیڑ دے تار ساز دل چنگ و رباب کچھ نہیں

    صاف دلوں کے واسطے تنگ ہے عرصۂ حیات

    ذات حباب خوب ہے عمر حباب کچھ نہیں

    برہمن اور شیخ میں جھگڑے یہی ہیں رات دن

    تیری کتاب کچھ نہیں تیری کتاب کچھ نہیں

    رات کو مے کدے میں کل تھی کسی مست کی صدا

    ایک نظر کا رنگ ہے رنگ شراب کچھ نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 55)
    • Author : Professor Unwan Chishti
    • مطبع : Asila Offset Printers, Kalan Mahal, Dariyaganj, New Delhi-6 (1989)
    • اشاعت : 1989

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY