ستارہ شام سے نکلا ہوا ہے

نصیر احمد ناصر

ستارہ شام سے نکلا ہوا ہے

نصیر احمد ناصر

MORE BY نصیر احمد ناصر

    ستارہ شام سے نکلا ہوا ہے

    دیا بھی طاق میں رکھا ہوا ہے

    کہیں وہ رات بھی مہکی ہوئی ہے

    کہیں وہ چاند بھی چمکا ہوا ہے

    ابھی وہ آنکھ بھی سوئی نہیں ہے

    ابھی وہ خواب بھی جاگا ہوا ہے

    کسی بادل کو چھو کر آ رہی ہے

    ہوا کا پیرہن بھیگا ہوا ہے

    زمیں بے عکس ہو کر رہ گئی ہے

    فلک کا آئنہ میلا ہوا ہے

    خموشی جھانکتی ہے کھڑکیوں سے

    گلی میں شور سا پھیلا ہوا ہے

    ہوا گم صم کھڑی ہے راستے میں

    مسافر سوچ میں ڈوبا ہوا ہے

    کوئی نیندوں میں خوشبو گھولتا ہے

    دریچہ خواب کا مہکا ہوا ہے

    کسی گزرے برس کی ڈائری میں

    تمہارا نام بھی لکھا ہوا ہے

    چراغ شام کی آنکھیں بجھی ہیں

    ستارہ خواب کا ٹوٹا ہوا ہے

    سفر کی رات ہے ناصرؔ دلوں میں

    عجب اک درد سا ٹھہرا ہوا ہے

    مآخذ:

    • Book : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 193)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999)
    • اشاعت : Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY