جان کا آزار ہے بیماریٔ دنیا نہیں

ارشد عبد الحمید

جان کا آزار ہے بیماریٔ دنیا نہیں

ارشد عبد الحمید

MORE BYارشد عبد الحمید

    جان کا آزار ہے بیماریٔ دنیا نہیں

    ذات تک محدود ہو جائیں تو کچھ خطرا نہیں

    اب حفاظت جتنی ہے محبوس ہو جانے میں ہے

    خود کے باہر گھومنے پھرنے کا اب موقع نہیں

    اس سے ملنا آبشاروں سے گزرنا تھا مگر

    خوف کا وہ کون سا طوفاں تھا جو آیا نہیں

    اب کے بچھڑے کب ملیں گے اب کی بار اک یہ سوال

    ہم نے بھی پوچھا نہیں اس نے بھی بتلایا نہیں

    معتبر کتنا بھی ہو ہر واسطہ مشکوک ہے

    جو تصور میں لکھا وہ خط بھی پہنچایا نہیں

    مجھ میں اک بچہ جو مضمر ہے بہت مسرور ہے

    ان دنوں دنیا سے اس کا مطلقاً رشتا نہیں

    مسئلہ کوئی بھی ہو ارشدؔ محیط عشق ہے

    جو غزل کا راہرو ہو راہ سے ہٹتا نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے