سونے سیاہ شہر پہ منظر پذیر میں

فرحت احساس

سونے سیاہ شہر پہ منظر پذیر میں

فرحت احساس

MORE BY فرحت احساس

    سونے سیاہ شہر پہ منظر پذیر میں

    آنکھیں قلیل ہوتی ہوئی اور کثیر میں

    مسجد کی سیڑھیوں پہ گداگر خدا کا نام

    مسجد کے بام و در پہ امیر و کبیر میں

    دراصل اس جہاں کو ضرورت نہیں مری

    ہر چند اس جہاں کے لیے ناگزیر میں

    میں بھی یہاں ہوں اس کی شہادت میں کس کو لاؤں

    مشکل یہ ہے کہ آپ ہوں اپنی نظیر میں

    مجھ تک ہے میرے دکھ کے تصوف کا سلسلہ

    اک زخم میں مرید تو اک زخم پیر میں

    ہر زخم قافلے کی گزر گاہ میرا دل

    روئے زمیں پہ ایک لہو کی لکیر میں

    RECITATIONS

    فرحت احساس

    فرحت احساس

    فرحت احساس

    سونے سیاہ شہر پہ منظر پذیر میں فرحت احساس

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites