تماشا ہے کہ سب آزاد قومیں

اسد ملتانی

تماشا ہے کہ سب آزاد قومیں

اسد ملتانی

MORE BY اسد ملتانی

    تماشا ہے کہ سب آزاد قومیں

    بہی جاتی ہیں آزادی کی رو میں

    وہ گرد کارواں بن کے چلے ہیں

    ستارے تھے رواں جن کے جلو میں

    سفر کیسا فقط آوارگی ہے

    نہیں منزل نگاہ راہرو میں

    ہے سوز دل ہی راز زندگانی

    حیات شمع ہے صرف اس کی لو میں

    بہت تھے ہم زباں لیکن جو دیکھا

    نہ نکلا ایک بھی ہمدرد سو میں

    اسدؔ ساقی کی ہے دوہری عنایت

    شراب کہنہ ڈالی جام نو میں

    ذریعہ:

    • Book: sheerazah (Pg. 22)
    • Author: makhmoor saeedi,Parem Gopal Mittal
    • مطبع: P -K Publication 3072 Partap stareet gola Market -Daryaganj delhi-6 (1973)
    • اشاعت: 1973
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites