تراش کر مرے بازو اڑان چھوڑ گیا

پروین شاکر

تراش کر مرے بازو اڑان چھوڑ گیا

پروین شاکر

MORE BYپروین شاکر

    تراش کر مرے بازو اڑان چھوڑ گیا

    ہوا کے پاس برہنہ کمان چھوڑ گیا

    رفاقتوں کا مری اس کو دھیان کتنا تھا

    زمین لے لی مگر آسمان چھوڑ گیا

    عجیب شخص تھا بارش کا رنگ دیکھ کے بھی

    کھلے دریچے پہ اک پھول دان چھوڑ گیا

    جو بادلوں سے بھی مجھ کو چھپائے رکھتا تھا

    بڑھی ہے دھوپ تو بے سائبان چھوڑ گیا

    نکل گیا کہیں ان دیکھے پانیوں کی طرف

    زمیں کے نام کھلا بادبان چھوڑ گیا

    عقاب کو تھی غرض فاختہ پکڑنے سے

    جو گر گئی تو یوں ہی نیم جان چھوڑ گیا

    نہ جانے کون سا آسیب دل میں بستا ہے

    کہ جو بھی ٹھہرا وہ آخر مکان چھوڑ گیا

    عقب میں گہرا سمندر ہے سامنے جنگل

    کس انتہا پہ مرا مہربان چھوڑ گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    مآخذ :
    • کتاب : kulliyaat-e-maahe tamaam(sadbarg) (Pg. 25)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY