طرب زاروں پہ کیا بیتی صنم خانوں پہ کیا گزری

ساحر لدھیانوی

طرب زاروں پہ کیا بیتی صنم خانوں پہ کیا گزری

ساحر لدھیانوی

MORE BY ساحر لدھیانوی

    طرب زاروں پہ کیا بیتی صنم خانوں پہ کیا گزری

    دل زندہ ترے مرحوم ارمانوں پہ کیا گزری

    زمیں نے خون اگلا آسماں نے آگ برسائی

    جب انسانوں کے دل بدلے تو انسانوں پہ کیا گزری

    ہمیں یہ فکر ان کی انجمن کس حال میں ہوگی

    انہیں یہ غم کہ ان سے چھٹ کے دیوانوں پہ کیا گزری

    مرا الحاد تو خیر ایک لعنت تھا سو ہے اب تک

    مگر اس عالم وحشت میں ایمانوں پہ کیا گزری

    یہ منظر کون سا منظر ہے پہچانا نہیں جاتا

    سیہ خانوں سے کچھ پوچھو شبستانوں پہ کیا گزری

    چلو وہ کفر کے گھر سے سلامت آ گئے لیکن

    خدا کی مملکت میں سوختہ جانوں پہ کیا گزری

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    طرب زاروں پہ کیا بیتی صنم خانوں پہ کیا گزری نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY