تھا مجھ سے ہم کلام مگر دیکھنے میں تھا

احمد مشتاق

تھا مجھ سے ہم کلام مگر دیکھنے میں تھا

احمد مشتاق

MORE BY احمد مشتاق

    تھا مجھ سے ہم کلام مگر دیکھنے میں تھا

    جانے وہ کس خیال میں تھا کس سمے میں تھا

    کیسے مکاں اجاڑ ہوا کس سے پوچھتے

    چولھے میں روشنی تھی نہ پانی گھڑے میں تھا

    تا صبح برگ و شاخ و شجر جھومتے رہے

    کل شب بلا کا سوز ہوا کے گلے میں تھا

    نیندوں میں پھر رہا ہوں اسے ڈھونڈھتا ہوا

    شامل جو ایک خواب مرے رتجگے میں تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تھا مجھ سے ہم کلام مگر دیکھنے میں تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY