تیر پہ تیر نشانوں پہ نشانے بدلے

سید عارف علی عارف

تیر پہ تیر نشانوں پہ نشانے بدلے

سید عارف علی عارف

MORE BYسید عارف علی عارف

    تیر پہ تیر نشانوں پہ نشانے بدلے

    شکر ہے حسن کے انداز پرانے بدلے

    پیار رسوا نہ ہوا آج تلک دونوں کا

    ہم نے ملنے کے نئے روز ٹھکانے بدلے

    دور آزادیٔ گلشن کا بہت یاد آیا

    میرے حصے کے جو صیاد نے دانے بدلے

    اک ملاقات نے دل پر کیا ایسا جادو

    پھر نہ اترا وہ نشہ لاکھ سیانے بدلے

    در بدر ٹھوکریں کھا کر نہ مقدر بدلا

    میرے حالات بھی بدلے تو خدا نے بدلے

    پہلے جیسا نہیں ماحول رہا گلشن کا

    رخ بدل اب تو ہواؤں کے زمانے بدلے

    پیش کیا کرتے انہیں جام محبت عارفؔ

    عمر کے ساتھ یہ موسم بھی سہانے بدلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY