توڑ کر تار نگہ کا سلسلہ جاتا رہا

حیدر علی آتش

توڑ کر تار نگہ کا سلسلہ جاتا رہا

حیدر علی آتش

MORE BY حیدر علی آتش

    توڑ کر تار نگہ کا سلسلہ جاتا رہا

    خاک ڈال آنکھوں میں میری قافلہ جاتا رہا

    کون سے دن ہاتھ میں آیا مرے دامان یار

    کب زمین و آسماں کا فاصلہ جاتا رہا

    خار صحرا پر کسی نے تہمت دزدی نہ کی

    پاؤں کا مجنوں کے کیا کیا آبلہ جاتا رہا

    دوستوں سے اس قدر صدمے اٹھائے جان پر

    دل سے دشمن کی عداوت کا گلہ جاتا رہا

    جب اٹھایا پاؤں آتشؔ مثل آواز جرس

    کوسوں پیچھے چھوڑ کر میں قافلہ جاتا رہا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY