تم نہیں پاس کوئی پاس نہیں

جگر بریلوی

تم نہیں پاس کوئی پاس نہیں

جگر بریلوی

MORE BY جگر بریلوی

    تم نہیں پاس کوئی پاس نہیں

    اب مجھے زندگی کی آس نہیں

    کشمکش میں نہ روح پڑ جائے

    یوں تو مرنے کا کچھ ہراس نہیں

    لالہ و گل بجھا سکیں جس کو

    عشق کی پیاس ایسی پیاس نہیں

    عمر سی عمر ہو گئی برباد

    دل ناداں عبث اداس نہیں

    سانس لینے میں درد ہوتا ہے

    اب ہوا زندگی کی راس نہیں

    راہ میں اپنی خاک ہونے دے

    اور کچھ میری التماس نہیں

    کیا بتاؤں مآل شوق جگرؔ

    آہ قائم مرے حواس نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    تم نہیں پاس کوئی پاس نہیں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY