طوفان ابر و باد سے ہر سو نمی بھی ہے

اختر ہوشیارپوری

طوفان ابر و باد سے ہر سو نمی بھی ہے

اختر ہوشیارپوری

MORE BY اختر ہوشیارپوری

    طوفان ابر و باد سے ہر سو نمی بھی ہے

    پیڑوں کے ٹوٹنے کا سماں دیدنی بھی ہے

    ارزاں ہے اپنے شہر میں پانی کی طرح خوں

    ورنہ وفا کا خون بڑا قیمتی بھی ہے

    یارو شگفت گل کی صدا پر چلے چلو

    دشت جنوں کے موڑ پہ کچھ روشنی بھی ہے

    ٹوٹے ہوئے مکاں ہیں مگر چاند سے مکیں

    اس شہر آرزو میں اک ایسی گلی بھی ہے

    بیگانہ وار گزری چلی جا رہی ہے زیست

    مڑ مڑ کے دوستوں کی طرح دیکھتی بھی ہے

    اخترؔ گزرتے لمحوں کی آہٹ پہ یوں نہ چونک

    اس ماتمی جلوس میں اک زندگی بھی ہے

    مآخذ:

    • Book : Range-e-Gazal (Pg. 116)
    • Author : shahzaad ahmad
    • مطبع : Ali Printers, 19-A Abate Road, Lahore (1988)
    • اشاعت : 1988

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY