عمر جو بے خودی میں گزری ہے

گلزار دہلوی

عمر جو بے خودی میں گزری ہے

گلزار دہلوی

MORE BYگلزار دہلوی

    عمر جو بے خودی میں گزری ہے

    بس وہی آگہی میں گزری ہے

    کوئی موج نسیم سے پوچھے

    کیسی آوارگی میں گزری ہے

    ان کی بھی رہ سکی نہ دارآئی

    جن کی اسکندری میں گزری ہے

    آسرا ان کی رہبری ٹھہری

    جن کی خود رہزنی میں گزری ہے

    آس کے جگنوؤ سدا کس کی

    زندگی روشنی میں گزری ہے

    ہم نشینی پہ فخر کر ناداں

    صحبت آدمی میں گزری ہے

    یوں تو شاعر بہت سے گزرے ہیں

    اپنی بھی شاعری میں گزری ہے

    میر کے بعد غالب و اقبال

    اک صدا، اک صدی میں گزری ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 301)
    • Author : Professor Unwan Chishti
    • اشاعت : 1989

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY