واقعہ کوئی تو ہو جاتا سنبھلنے کے لیے

زبیر فاروقؔ

واقعہ کوئی تو ہو جاتا سنبھلنے کے لیے

زبیر فاروقؔ

MORE BYزبیر فاروقؔ

    واقعہ کوئی تو ہو جاتا سنبھلنے کے لیے

    راستہ مجھ کو بھی ملتا کوئی چلنے کے لیے

    کیوں نہ سوغات سمجھ کر میں اسے کرتا قبول

    بھیجتے زہر وہ مجھ کو جو نگلنے کے لیے

    اتنی سردی ہے کہ میں بانہوں کی حرارت مانگوں

    رت یہ موزوں ہے کہاں گھر سے نکلنے کے لیے

    چاہیے کوئی اسے ناز اٹھانے والا

    دل تو تیار ہے ہر وقت مچلنے کے لیے

    اب تو فاروقؔ اسی حال میں خوش رہتے ہیں

    وقت ہے پاس کہاں اپنے بدلنے کے لیے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY