وہ مرے حساب میں انتہا نہیں چاہتا

خاور اعجاز

وہ مرے حساب میں انتہا نہیں چاہتا

خاور اعجاز

MORE BY خاور اعجاز

    وہ مرے حساب میں انتہا نہیں چاہتا

    مگر ایک میں ہوں کہ ابتدا نہیں چاہتا

    مرے صحن پر کھلا آسمان رہے کہ میں

    اسے دھوپ چھاؤں میں بانٹنا نہیں چاہتا

    کبھی کھل سکے کسی اعتبار کے دور میں

    مجھے چاہتا ہے وہ دل سے یا نہیں چاہتا

    کوئی اور بھی ہو چراغ بزم حیات کا

    سر طاق رکھا ہوا دیا نہیں چاہتا

    یہ مرے وجود کا مسئلہ بھی عجیب ہے

    جو میں چاہتا ہوں وہ دوسرا نہیں چاہتا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ مرے حساب میں انتہا نہیں چاہتا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY