وہ صبر دے کہ نہ دے جس نے بیقرار کیا

جوشؔ ملیح آبادی

وہ صبر دے کہ نہ دے جس نے بیقرار کیا

جوشؔ ملیح آبادی

MORE BY جوشؔ ملیح آبادی

    وہ صبر دے کہ نہ دے جس نے بیقرار کیا

    بس اب تمہیں پہ چلو ہم نے انحصار کیا

    تمہارا ذکر نہیں ہے تمہارا نام نہیں

    کیا نصیب کا شکوہ ہزار بار کیا

    ثبوت ہے یہ محبت کی سادہ لوحی کا

    جب اس نے وعدہ کیا ہم نے اعتبار کیا

    مآل ہم نے جو دیکھا سکون و جنبش کا

    تو کچھ سمجھ کے تڑپنا ہی اختیار کیا

    مرے خدا نے مرے سب گناہ بخش دیے

    کسی کا رات کو یوں میں نے انتظار کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY