یادوں کے باغ سے وہ ہرا پن نہیں گیا

انور شعور

یادوں کے باغ سے وہ ہرا پن نہیں گیا

انور شعور

MORE BYانور شعور

    یادوں کے باغ سے وہ ہرا پن نہیں گیا

    ساون کے دن چلے گئے ساون نہیں گیا

    ٹھہرا تھا اتفاق سے وہ دل میں ایک بار

    پھر چھوڑ کر کبھی یہ نشیمن نہیں گیا

    ہر گل میں دیکھتا رخ لیلیٰ وہ آنکھ سے

    افسوس قیس دشت سے گلشن نہیں گیا

    رکھا نہیں مصور فطرت نے مو قلم

    شہ پارہ بن رہا ہے ابھی بن نہیں گیا

    میں نے خوشی سے کی ہے یہ تنہائی اختیار

    مجھ پر لگا کے وہ کوئی قدغن نہیں گیا

    تھا وعدہ شام کا مگر آئے وہ رات کو

    میں بھی کواڑ کھولنے فوراً نہیں گیا

    دشمن کو میں نے پیار سے راضی کیا شعورؔ

    اس کے مقابلے کے لئے تن نہیں گیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    انور شعور

    انور شعور

    انور شعور

    انور شعور

    RECITATIONS

    انور شعور

    انور شعور

    انور شعور

    یادوں کے باغ سے وہ ہرا پن نہیں گیا انور شعور

    مأخذ :
    • کتاب : Dil Ka Kia Rang Karoon (Pg. 85)
    • Author : Anwer Shaoor
    • مطبع : Syed Farid Hussain (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY