یکم جنوری ہے نیا سال ہے

امیر قزلباش

یکم جنوری ہے نیا سال ہے

امیر قزلباش

MORE BYامیر قزلباش

    یکم جنوری ہے نیا سال ہے

    دسمبر میں پوچھوں گا کیا حال ہے

    بچائے خدا شر کی زد سے اسے

    بیچارہ بہت نیک اعمال ہے

    بتانے لگا رات بوڑھا فقیر

    یہ دنیا ہمیشہ سے کنگال ہے

    ہے دریا میں کچا گھڑا سوہنی

    کنارے پہ گم صم مہیوال ہے

    میں رہتا ہوں ہر شام شکوہ بہ لب

    مرے پاس دیوان اقبالؔ ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یکم جنوری ہے نیا سال ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY