یہ دنیا ہے یہاں اصلی کہانی پشت پر رکھنا

احتشام الحق صدیقی

یہ دنیا ہے یہاں اصلی کہانی پشت پر رکھنا

احتشام الحق صدیقی

MORE BYاحتشام الحق صدیقی

    یہ دنیا ہے یہاں اصلی کہانی پشت پر رکھنا

    لبوں پر پیاس رکھنا اور پانی پشت پر رکھنا

    تمناؤں کے اندھے شہر میں جب مانگنے نکلو

    تو چادر صبر کی صدیوں پرانی پشت پر رکھنا

    میں اک مزدور ہوں روٹی کی خاطر بوجھ اٹھاتا ہوں

    مری قسمت ہے بار حکمرانی پشت پر رکھنا

    تجھے بھی اس کہانی میں کہیں کھونا ہے شہزادے

    خدا حافظ یہ مہر خاندانی پشت پر رکھنا

    ہمیشہ وقت کا دریا اسے رفتار بخشے گا

    جسے آتا ہو دریا کی روانی پشت پر رکھنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY