یہ اک شجر کہ جس پہ نہ کانٹا نہ پھول ہے

شہریار

یہ اک شجر کہ جس پہ نہ کانٹا نہ پھول ہے

شہریار

MORE BYشہریار

    یہ اک شجر کہ جس پہ نہ کانٹا نہ پھول ہے

    سائے میں اس کے بیٹھ کے رونا فضول ہے

    راتوں سے روشنی کی طلب ہائے سادگی

    خوابوں میں اس کی دید کی خو کیسی بھول ہے

    ہے ان کے دم قدم ہی سے کچھ آبروئے زیست

    دامن میں جن کے دشت تمنا کی دھول ہے

    سورج کا قہر صرف برہنہ سروں پہ ہے

    پوچھو ہوس پرست سے وہ کیوں ملول ہے

    آؤ ہوا کے ہاتھ کی تلوار چوم لیں

    اب بزدلوں کی فوج سے لڑنا فضول ہے

    مأخذ :
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 29)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY