یہ اک تیرا جلوہ صنم چار سو ہے

گویا فقیر محمد

یہ اک تیرا جلوہ صنم چار سو ہے

گویا فقیر محمد

MORE BYگویا فقیر محمد

    یہ اک تیرا جلوہ صنم چار سو ہے

    نظر جس طرف کیجیے تو ہی تو ہے

    یہ کس مست کے آنے کی آرزو ہے

    کہ دست دعا آج دست سبو ہے

    نہ ہوگا کوئی مجھ سا محو تصور

    جسے دیکھتا ہوں سمجھتا ہوں تو ہے

    مکدر نہ ہو یار تو صاف کہہ دوں

    نہ کیونکر ہو خودبیں کہ آئینہ رو ہے

    کبھی رخ کی باتیں کبھی گیسوؤں کی

    سحر سے یہی شام تک گفتگو ہے

    کسی گل کے کوچے سے گزری ہے شاید

    صبا آج جو تجھ میں پھولوں کی بو ہے

    نہیں چاک دامن کوئی مجھ سا گویاؔ

    نہ بخیہ کی خواہش نہ فکر رفو ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یہ اک تیرا جلوہ صنم چار سو ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY