یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں

بیدل حیدری

یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں

بیدل حیدری

MORE BYبیدل حیدری

    یہ جو چہروں پہ لئے گرد الم آتے ہیں

    یہ تمہارے ہی پشیمان کرم آتے ہیں

    اتنا کھل کر بھی نہ رو جسم کی بستی کو بچا

    بارشیں کم ہوں تو سیلاب بھی کم آتے ہیں

    تو سنا تیری مسافت کی کہانی کیا ہے

    میرے رستے میں تو ہر گام پہ خم آتے ہیں

    خول چہروں پہ چڑھانے نہیں آتے ہم کو

    گاؤں کے لوگ ہیں ہم شہر میں کم آتے ہیں

    وہ تو بیدلؔ کوئی سوکھا ہوا پتا ہوگا

    تیرے آنگن میں کہاں ان کے قدم آتے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY