زباں سخن کو سخن بانکپن کو ترسے گا

ناصر کاظمی

زباں سخن کو سخن بانکپن کو ترسے گا

ناصر کاظمی

MORE BY ناصر کاظمی

    زباں سخن کو سخن بانکپن کو ترسے گا

    سخن کدہ مری طرز سخن کو ترسے گا

    نئے پیالے سہی تیرے دور میں ساقی

    یہ دور میری شراب کہن کو ترسے گا

    مجھے تو خیر وطن چھوڑ کر اماں نہ ملی

    وطن بھی مجھ سے غریب الوطن کو ترسے گا

    انہی کے دم سے فروزاں ہیں ملتوں کے چراغ

    زمانہ صحبت ارباب فن کو ترسے گا

    بدل سکو تو بدل دو یہ باغباں ورنہ

    یہ باغ سایۂ سرو و سمن کو ترسے گا

    ہوائے ظلم یہی ہے تو دیکھنا اک دن

    زمین پانی کو سورج کرن کو ترسے گا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    زباں سخن کو سخن بانکپن کو ترسے گا نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY