ظفرؔ فسانوں کہ داستانوں میں رہ گئے ہیں

ظفر اقبال

ظفرؔ فسانوں کہ داستانوں میں رہ گئے ہیں

ظفر اقبال

MORE BYظفر اقبال

    ظفرؔ فسانوں کہ داستانوں میں رہ گئے ہیں

    ہم اپنے گزرے ہوئے زمانوں میں رہ گئے ہیں

    عجب نہیں ہے کہ خود ہوا کے سپرد کر دیں

    یہ چند تنکے جو آشیانوں میں رہ گئے ہیں

    مکین سب کوچ کر گئے ہیں کسی طرف کو

    اب ان کے آثار ہی مکانوں میں رہ گئے ہیں

    سنا کرو صبح و شام کڑوی کسیلی باتیں

    کہ اب یہی ذائقے زبانوں میں رہ گئے ہیں

    پسند آئی ہے اس قدر خاطر و تواضع

    جو میہماں سارے میزبانوں میں رہ گئے ہیں

    ہمیں ہی شو کیس میں سجا کر رکھا گیا تھا

    بڑے ہمیں شہر کی دکانوں میں رہ گئے ہیں

    ابھی یہی انقلاب آیا ہے رفتہ رفتہ

    جو رونے والے تھے ناچ گانوں میں رہ گئے ہیں

    الگ الگ اپنا اپنا پرچم اٹھا رکھا ہے

    کہ ہم قبیلوں نہ خاندانوں میں رہ گئے ہیں

    ظفرؔ زمیں زاد تھے زمیں سے ہی کام رکھا

    جو آسمانی تھے آسمانوں میں رہ گئے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY