زخم تازہ برگ گل میں منتقل ہوتے گئے

ظہیر صدیقی

زخم تازہ برگ گل میں منتقل ہوتے گئے

ظہیر صدیقی

MORE BY ظہیر صدیقی

    زخم تازہ برگ گل میں منتقل ہوتے گئے

    پنجۂ سفاک میں خنجر خجل ہوتے گئے

    دید کے قابل تھا ان صحرا نوردوں کا جنوں

    منزلیں ملتی گئیں ہم مضمحل ہوتے گئے

    نور کا رشتہ سواد جسم سے کٹتا گیا

    ہم بھی آخر باد و آتش آب و گل ہوتے گئے

    خون میں اونچے چناروں کے نہ حدت آ سکی

    یوں بظاہر سبز پتے مشتعل ہوتے گئے

    دل کے دفتر میں تھا جذبوں کا تقرر عارضی

    ہاں جو ان میں معتبر تھے مستقل ہوتے گئے

    جیسے جیسے آگہی بڑھتی گئی ویسے ظہیرؔ

    ذہن و دل اک دوسرے سے منفصل ہوتے گئے

    مآخذ:

    • کتاب : Roshan Waraq Waraq (Pg. 15)
    • Author : Zaheer Siddiqui
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY