زندگی اب اس قدر سفاک ہو جائے گی کیا

رضا مورانوی

زندگی اب اس قدر سفاک ہو جائے گی کیا

رضا مورانوی

MORE BYرضا مورانوی

    زندگی اب اس قدر سفاک ہو جائے گی کیا

    بھوک ہی مزدور کی خوراک ہو جائے گی کیا

    میرے قاتل سے کوئی اے کاش اتنا پوچھ لے

    یہ زمیں میرے لہو سے پاک ہو جائے گی کیا

    ہر طرف عریاں تنی کے جشن ہوں گے روز و شب

    اس قدر تہذیب نو بے باک ہو جائے گی کیا

    بڑھ گیا سایہ اگر قد سے تو بڑھنے دیجئے

    خاک اڑ کر ہمسر افلاک ہو جائے گی کیا

    قید ہستی سے بمشکل ہو سکا تھا میں رہا

    میری مٹی کاسہ گر کا چاک ہو جائے گی کیا

    ساری دنیا ڈھل رہی ہے مغربی تہذیب میں

    بے حیائی اب مری پوشاک ہو جائے گی کیا

    واقعی دریائے غم کے تیز دھاروں میں رضاؔ

    زندگی میری خس و خاشاک ہو جائے گی کیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY