زندگی کیسے لگی دیوار سے

اظہر عباس

زندگی کیسے لگی دیوار سے

اظہر عباس

MORE BYاظہر عباس

    زندگی کیسے لگی دیوار سے

    پوچھنا بھی کیا کسی دیوار سے

    بس مجھے سر پھوڑنے کا شوق تھا

    بات تھی دیوار کی دیوار سے

    ٹوٹتے دل کی کہانی بھی کہی

    یعنی پھر ٹوٹی ہوئی دیوار سے

    آؤ ہم دیوار گریہ کا پتہ

    پوچھ لیتے ہیں کسی دیوار سے

    جو رکاوٹ تھی ہماری راہ کی

    راستہ نکلا اسی دیوار سے

    دستکوں سے در تھے ایسے بے نیاز

    لگ گئیں آنکھیں مری دیوار سے

    اس طرف سورج نکل آیا ہے کیا

    آ رہی ہے روشنی دیوار سے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY