زندگی یوں بھی گزاری جا رہی ہے

عزم شاکری

زندگی یوں بھی گزاری جا رہی ہے

عزم شاکری

MORE BYعزم شاکری

    زندگی یوں بھی گزاری جا رہی ہے

    جیسے کوئی جنگ ہاری جا رہی ہے

    جس جگہ پہلے کے زخموں کے نشاں میں

    پھر وہیں پر چوٹ ماری جا رہی ہے

    وقت رخصت آب دیدہ آپ کیوں ہیں

    جسم سے تو جاں ہماری جا رہی ہے

    بول کر تعریف میں کچھ لفظ اس کی

    شخصیت اپنی نکھاری جا رہی ہے

    دھوپ کے دستانے ہاتھوں میں پہن کر

    برف کی چادر اتاری جا رہی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY