زندگی زہر کا اک جام ہوئی جاتی ہے

نہال سیوہاروی

زندگی زہر کا اک جام ہوئی جاتی ہے

نہال سیوہاروی

MORE BYنہال سیوہاروی

    زندگی زہر کا اک جام ہوئی جاتی ہے

    کیا سے کیا یہ مے گلفام ہوئی جاتی ہے

    کچھ گزاری ہے غم عشق و محبت میں حیات

    کچھ سپرد غم ایام ہوئی جاتی ہے

    پھر کسی مرد براہیم کا محتاج ہے دہر

    پھر وہی کثرت اصنام ہوئی جاتی ہے

    ہوس سیر تماشہ ہے کہ ہوتی نہیں ختم

    زندگی ہے کہ سبک گام ہوئی جاتی ہے

    جو کبھی خالق ہنگامۂ طوفاں تھی وہ موج

    حیف خو کردۂ آرام ہوئی جاتی ہے

    صحبت پیر مغاں میں یہ کھلی عظمت عشق

    عقل بھی درد تہ جام ہوئی جاتی ہے

    تم جو آئے ہو تو شکل در و دیوار ہے اور

    کتنی رنگین مری شام ہوئی جاتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 902)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY