آگ

MORE BYانور مقصود زاہدی

    سلگتے ہوئے

    میٹھے جذبات

    کی آگ سے جسم

    کچھ اس طرح تپ رہا ہے

    کہ جی چاہتا ہے نظر جو بھی آئے

    اسے اپنی بانہوں میں کچھ ایسے بھینچوں

    کہ میرے بدن میں سما جائے وہ یوں

    نظر تک نہ آئے

    ہٹاؤں جو بانہیں

    میں اس کے گلے سے

    تو ڈھیر ایک مٹی کا

    قدموں میں پاؤں

    مأخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 31)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY