دو سانسوں کی گہرائی میں

صلاح الدین محمود

دو سانسوں کی گہرائی میں

صلاح الدین محمود

MORE BYصلاح الدین محمود

    دو سانسوں کی گہرائی میں

    جہاں لہو

    بے حد بھیتر کے، بالکل ساکت

    میدانوں میں

    چاند کی ہر رنگت بہتا ہے

    وہاں پلی

    اک ننگی ناری

    بے حد بھیتر کی رکھوالی

    چاندی جیسے لہو کو اپنے

    بدن میں بھی تنہا پاتی ہے،

    شنوائی سے دور ہمیشہ

    شنوائی کا لب ہوتا ہے

    ننگی ناری

    دو سانسوں کے بے حد بھیتر

    سانس کے بن میں

    گھبراتی ہے

    چاند ہمیشہ سے بہتا ہے

    سانس ہمیشہ ہی جاری ہے

    رات نگاہوں کے اندر بھی

    باہر بھی! اک بیداری ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 73)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY