ایکسٹیسی

پروین شاکر

ایکسٹیسی

پروین شاکر

MORE BYپروین شاکر

    سبز مدھم روشنی میں سرخ آنچل کی دھنک

    سرد کمرے میں مچلتی گرم سانسوں کی مہک

    بازوؤں کے سخت حلقے میں کوئی نازک بدن

    سلوٹیں ملبوس پر آنچل بھی کچھ ڈھلکا ہوا

    گرمئ رخسار سے دہکی ہوئی ٹھنڈی ہوا

    نرم زلفوں سے ملائم انگلیوں کی چھیڑ چھاڑ

    سرخ ہونٹوں پر شرارت کے کسی لمحے کا عکس

    ریشمیں بانہوں میں چوڑی کی کبھی مدھم کھنک

    شرمگیں لہجوں میں دھیرے سے کبھی چاہت کی بات

    دو دلوں کی دھڑکنوں میں گونجتی تھی اک صدا

    کانپتے ہونٹوں پہ تھی اللہ سے صرف اک دعا

    کاش یہ لمحے ٹھہر جائیں ٹھہر جائیں ذرا!

    مأخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 35)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY